10 views
Ref. No. 39 / 808
السلام علیکم
ایسے مدرسے میں جہاں درجہ پنجم تک گاؤں کےمسکین غیر مسکین  بچے پڑھتے ہیں اور مدرسہ انکے کھانے اور کوئ امداد نہ کرتا ہو تو کیا ایسے مدرسے میں زکوت کی رقم دینا جس سے اساتذہ کی تنخواہ دی جاتی ہے اور مدرسے کے کاموں میں خرچ کی جاتی
تو کیا یہ درست ہے یا نہیں؟
asked Oct 3 in زکوۃ / صدقہ و فطرہ by Suhail Ahmad Qasmi

1 Answer

Ref. No. 39 / 800

الجواب وباللہ التوفیق                                                                                                                                                        

بسم اللہ الرحمن الرحیم:۔ زکوۃ کی رقم کا براہ راست اساتذہ کی تنخواہوں یا مدرسہ کی ضروریات  میں خرچ کرنا جائز نہیں ہے۔ زکوۃ کی رقم کسی مستحق زکوۃ کی ملکیت میں دینا ضروری ہے  جس کو اختیار ہو کہ اپنی مرضی سے جہاں چاہے خرچ کرے۔ پھر اگر اہل مدرسہ نے اس کو ترغیب دے کے کچھ رقم حاصل کرلی تو پھر اس رقم کو مدرسہ کی ضروریات  اور اساتذہ کی تنخواہوں وغیرہ میں خرچ کرنے میں حرج نہیں ہے۔  کذا فی الفقہ  

واللہ اعلم بالصواب

 

دارالافتاء

دارالعلوم وقف دیوبند

answered Oct 8 by Darul Ifta
...