108 views
اگر کوئ عورت  نکاح کے بعد اپنے نام سے عقیقہ کرنا چاہے تو اس کے لئے بال  کاٹنا چاہئے یا بغیر بال کاٹے کے عقیقہ ہوجائے گا
asked Jul 5, 2020 in ذبیحہ / قربانی و عقیقہ by Malikdana313

1 Answer

Ref. No. 989/41-141

الجواب وباللہ التوفیق 

بسم اللہ الرحمن الرحیم:۔بال کاٹنے کی ضرورت نہیں ، عقیقہ درست ہوجائے گا۔ ولادت سے ساتویں دن کے بعد  اگر عقیقہ کرے تو بال کٹوانا ضروری نہیں ہے۔  

يستحب لمن ولد له ولد أن يسميه يوم أسبوعه ويحلق رأسه ويتصدق عند الأئمة الثلاثة بزنة شعره فضة أو ذهبا ثم يعق عند الحلق عقيقة إباحة على ما في الجامع المحبوبي، أو تطوعا على ما في شرح الطحاوي  (شامی 6/336)

واللہ اعلم بالصواب

دارالافتاء

دارالعلوم وقف دیوبند

answered Jul 7, 2020 by Darul Ifta
...