20 views
السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ
ہم نے دو جگہ سفر کا ارادہ کیا مثلا دیوبند سے پہلے سہارنپور جائیں گے  پھر وہاں سے گنگوہ جائیں گے  اس حساب سے سفر 84 کلومیٹر کا ہوتا ہے. لیکن اگر کوئی مسافر سیدھا دیوبند سے گنگوہ جاتا ہے تو 44 کلو میٹر بنتا ہے تو کیا پہلی صورت میں جبکہ اس کا ارادہ گنگوہ جانے کا ہو وایا سہارنپور تو چونکہ مسافت سفر شرعی پایا جارہا ہے تو کیا اس صورت میں قصر کریں گے یا اتمام؟؟ اسکی وضاحت فرمادیں
asked Nov 23, 2020 in احکام سفر by Ahsan Qasmi

1 Answer

Ref. No. 1217/42-523

الجواب وباللہ التوفیق 

بسم اللہ الرحمن الرحیم:۔  صورت مسئولہ میں جس راستے سے سفر شروع کیا ہے اسی کا اعتبار ہے۔ لہذا مذکورہ شخص مسافر رہے گا اور قصر کرےگا۔

ولو لموضع طريقان أحدهما مدة السفر والآخر أقل قصر في الأول لا الثاني. )(الدر مع الرد باب صلوۃ المسافر 2/123)

"وتعتبر المدة من أي طريق أخذ فيه، كذا في البحر الرائق. فإذا قصد بلدة وإلى مقصده طريقان: أحدهما مسيرة ثلاثة أيام ولياليها، والآخر دونها، فسلك الطريق الأبعد كان مسافراً عندنا، هكذا في فتاوى قاضي خان. وإن سلك الأقصر يتم، كذا في البحر الرائق". الفتاوى الهندية (1/ 138)

"وقال أبو حنيفة: إذا خرج إلى مصر في ثلاثة أيام وأمكنه أن يصل إليه من طريق آخر في يوم واحد قصر". بدائع الصنائع في ترتيب الشرائع (1/ 94)

واللہ اعلم بالصواب

دارالافتاء

دارالعلوم وقف دیوبند

answered Nov 26, 2020 by Darul Ifta
...