19 views
السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔۔
کیا کوئی شخص اپنےجانور میں کسی شریک سےکم پیسے لے سکتا ہے۔۔.مثلا:5000/کا جانور ہے اب کوئ شخص نفع لیکر 7000/کا متعین کرتا ہے اور اسی حساب سے لوگوں کو حصے دار بناتا ہے لیکن اگر کسی شریک سے فی حصہ 1000/کے بجائے 700/لیتا ہے۔۔۔تو کیا اس طرح کرنا صحیح ہوگا۔۔۔یا اسکا حصہ ساتویں سے کم مانا جائیگا ۔۔۔؟
asked Jul 10 in ذبیحہ / قربانی و عقیقہ by Ahsan Qasmi

1 Answer

Ref. No. 1503/42-980

الجواب وباللہ التوفیق

بسم اللہ الرحمن الرحیم:۔قربانی  کے بڑے جانور میں شرکت  کے لئے تمام لوگوں کی رقم اس طور پر شامل ہونی  ضروری ہے کہ کسی بھی شریک کا حصہ ساتویں حصہ سے کم نہ ہو۔ یعنی  کسی ایک  سے ساتویں حصہ سے کم پیسے لینا درست نہیں ہوگا۔  لہذا اگر کسی نے ایک ہی جانور کے حصے مختلف قیمتوں میں بیچے تو جس کا حصہ جانور کی کل رقم کے ساتویں حصہ سے کم ہوگا اس کی قربانی درست نہیں ہوگی۔ اور پھر کسی کی قربانی درست نہیں ہوگی۔  

فشمل ما إذا اتفقت الأنصباء قدرا أو لا لكن بعد أن لا ينقص عن السبع، ولو اشترك سبعة في خمس بقرات أو أكثر صح لأن لكل منهم في بقرة سبعها لا ثمانية في سبع بقرات أو أكثر، لأن كل بقرة على ثمانية أسهم فلكل منهم أقل من السبع (شامی، کتاب الاضحیۃ 6/316) ولا تجوز عن ثمانية أخذا بالقياس فيما لا نص فيه وكذا إذا كان نصيب أحدهم أقل من السبع، ولا تجوز عن الكل لانعدام وصف القربة في البعض (العنایۃ شرح الھدایۃ، کتاب الاضحیۃ 9/511) وتجوز عن ستة، أو خمسة، أو أربعة، أو ثلاثة ذكره في الأصل لأنه لما جاز عن سبعة فما دونها أولى، ولا يجوز عن ثمانية لعدم النقل فيه وكذا إذا كان نصيب أحدهم أقل من سبع بدنة لا يجوز عن الكل لأنه بعضه إذا خرج عن كونه قربة خرج كله (البحرالرائق، کتاب الاضحیۃ 8/198)

واللہ اعلم بالصواب

دارالافتاء

دارالعلوم وقف دیوبند

answered Jul 15 by Darul Ifta
...