98 views
السلام علیکم
زیدکی بیٹی ایک مدرسہ کے اندر تعلیم حاصل کر رہی ہے،مدرسہ کی کل فیس 1600 پاؤند ہے، مدرسہ والوں نے زیدکو یہ کہا کہ اگر وہ اپنی یا کسی اور شخص کی زکوۃ کی رقم کسی غریب طالب علم کی مدد کیلۓ مدرسہ کو دینگے تو زیدکی بیٹی کی زکوۃ کی رقم کے بقدر فیس کم کر دی جاءیگی مثال کے طور پر اگر زید 300پاؤند زکوۃکی رقم مدرسہ والوں کو دیتا ہے تو زید کو 1600پاؤند فیس کے بجاۓ 1300پاؤندفیس دینی پریگی، 300پاؤند فیس کم کردی جاءیگی، کیا یہ طریقہ شرعا جاءز ہے؟ اور ایسا کرنے سے زکوۃ زید کی زکوۃ ادا ہوجاءیگی؟
   حوالہ کے ساتھ جواب مرحمت فرماۓ۔بینوا توجروا۔
asked May 31, 2016 in زکوۃ / صدقہ و فطرہ by Abdullah

1 Answer

Ref. No. 37 / 1112

الجواب وباللہ التوفیق                                                                                                                                                        

بسم اللہ الرحمن الرحیم: ایسا کرنا درست ہے، اس سے زکوۃ ادا ہوجائے گی۔  واللہ اعلم بالصواب

دارالافتاء

دارالعلوم وقف دیوبند

 

answered Aug 7, 2016 by Darul Ifta
...