78 views
علم لدنی، وہبی اور علم کسبی میں فرق:
(۱۲۵)سوال:علم لدنی، وہبی اور علم کسبی میں کیا فرق ہے؟
فقط: والسلام
المستفتی: حکیم الدین، سہارنپور
asked Sep 19, 2023 in فقہ by azhad1

1 Answer

الجواب وباللّٰہ التوفیق:علم لدنی یا وہبی اس علم کو کہتے ہیں، جو بغیر سیکھے اللہ تعالیٰ اپنی رحمت خاصہ سے عطا فرمادیتے ہیں اور جو علم سیکھا جائے، خواہ مدارس سے یا خانقاہوں سے یا کسی پیر ومرشد سے وہ علم کسبی کہلاتا ہے۔ (۱)

(۱) {فَوَجَدَا عَبْدًا مِّنْ عِبَادِنَآ أٰتَیْنٰہُ رَحْمَۃً مِّنْ عِنْدِنَا وَعَلَّمْنٰہُ مِّنْ لَّدُنَّا عِلْمًاہ۶۵} (سورۃ الکہف: ۶۵)
یا موسیٰ اني علی علم من علم اللّٰہ علمنیہ لا تعلمہ وأنت علی علم من علم اللّٰہ علمک اللّٰہ علماً لا أعلمہ۔ (محمد ثناء اللّٰہ پاني پتي، تفسیر المظہري، ’’تحت تفسیر آیۃ: ۶۵‘‘: ج ۵، ص: ۳۹۶)
ثم إن الذي أمیل إلیہ أن موسیٰ علیہ السلام علم بعلم الحقیقۃ المسمیٰ بالعلم الباطني والعلم اللدني إلا أن الخضر أعلم بہ منہ، وللخضر علیہ السلام سواء کان نبیاً أو رسولاً علماً بعلم الشریعۃ المسمیٰ بالعلم الظاہر إلا أن موسیٰ علیہ السلام أعلم بہ منہ فکل منہما أعلم من صاحبہ من وجہ۔ (علامہ آلوسي، روح المعاني، ’’سورۃ کہف‘‘۶۵: ج ۹، ص: ۴۷۸)
فإن حصل بواسطۃ البشر فہو کسبي، وإلا فہو العلم اللدني الخ۔ (ملا علي قاري، مرقاۃ المفاتیح، ’’کتاب العلم، الفصل الأول‘‘: ج ۱، ص: ۲۶۱، رقم: ۱۹۸)

فتاوی دارالعلوم وقف دیوبند ج2ص168

answered Sep 19, 2023 by Darul Ifta
...