40 views
السلام علیکم۔ سوال یہ ہے کہ کعبہ کی طرف پیر کرنے کا  کیا حکم ہے؟ جب صحابہ، تابعین، تبع تابعین نے اسے ناجائز نہ مانا تو آج کے مولوی اس کو ناجائز کیوں کہتے ہیں؟ یہ سب ادب میں غلو نہیں
asked Aug 1, 2023 in فقہ by abdulahad

1 Answer

Ref. No. 2455/45-3722

بسم اللہ الرحمن الرحیم:۔  حدیث شریف میں قبلہ کی جانب تھوکنے، قضائے حاجت کرنے وغیرہ امور سے منع کیا گیاہے،  اور ان امور کو قبلہ کے احترام و ادب کےخلاف گرداناگیاہے، ظاہر ہے جب ہمارے یہاں کسی قابل احترام آدمی کی جانب پیر کرنا ادب کے خلاف سمجھاجاتاہے تو کعبہ کی جانب اس کو احترام کے خلاف کیوں نہ سمجھاجائے۔ اسی وجہ سے فقہاء نے صراحت کی ہے کہ اگر کوئی جان بوجھ کر قبلہ کی جانب پیر کرتاہے او اس کو معمولی چیز سمجھتاہے تو مکروہ تحریمی کا مرتکب ہوگا اور گنہگار ہوگا، البتہ اگر کسی کا پیر نادانی میں قبلہ کی جانب ہوگیا تو کوئی گناہ نہیں۔

 ویکره  تحریماً استقبال القبلة بالفرج ۔۔۔کماکره مد رجلیه فی نوم او غیرها الیها ای عمدا لانه اساء ة ادب ۔ قال تحته: سیاتی انه بمد الرجل الیها ترد شهادته (فتاوی شامی ج ۱، ص: ۶۵۵)

قال الحصکفي: وکذا یکرہ ۔۔۔۔مد رجلہ الیہا ۔۔۔۔۔ ( الدر المختار مع رد المحتار : ۳/۵۵، فصل : الاستنجاء(

يُكْرَهُ أنْ يَمُدَّ رِجْلَيْهِ فِي النَّوْمِ وغَيْرِهِ إلى القِبْلَةِ أوْ المُصْحَفِ أوْ كُتُبِ الفِقْهِ إلّا أنْ تَكُون عَلى مَكان مُرْتَفِعٍ عَنْ المُحاذاةِ۔ (فتح القدیر : ١/٤٢٠)

عَنْ حُذَیْفَةَ رضي الله عنه أظُنُّهُ عَنْ رَسُولِ الله صلي الله عليه وسلم قَالَ مَنْ تَفَلَ تُجَاهَ الْقِبْلَةِ جَاء یَوْمَ الْقِیَامَةِ تَفْلُهُ بَیْنَ عَیْنَیْهِ۔ (أبوداؤد، رقم ١٦٨)

(كَمَا كُرِهَ) تَحْرِيمًا (اسْتِقْبَالُ قِبْلَةٍ وَاسْتِدْبَارُهَا لِ) أَجْلِ (بَوْلٍ أَوْ غَائِطٍ) .... (وَلَوْ فِي بُنْيَانٍ) لِإِطْلَاقِ النَّهْيِ۔ (شامی : ١/٣٤١)

عن أبي ہریرۃ رضي اللّٰہ عنہ قال: قال رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم: إذا جلس أحدکم علی حاجتہ فلا یستقبل القبلۃ ولا یستدبرہا۔ (صحیح بن خزیمۃ، رقم : ۱۳۱۳)

ویکرہ استقبال … مہب الریح لعودہ بہ فینجسہ۔ (مراقي الفلاح مع حاشیۃ الطحطاوي : ۵۳)

واللہ اعلم بالصواب

دارالافتاء

دارالعلوم وقف دیوبند

 

answered Aug 7, 2023 by Darul Ifta
...