26 views
1:جس طرح مولانا شاہ حکیم محمد اختر رحمہ االلہ ذکر کی مجالس کرتی تہے اوسکہ اسلام میں کیا حکم ھے؟
2: صوفیا کرام جو کہتی ہے کہ اللہ دل میں اتی ہے اسکہ کیا مطلب ہے؟
3:کیا حضرت شاہ فیروز عبداللہ میمن دامت برکاتہم جو مولانا شاہ حکیم محمد کے خلفا میں سی ہے کے بیانات سنہ اصلاحی تعلق قایم کرنا درست ہے؟
asked Jan 31 in متفرقات by milad popal

1 Answer

Ref. No. 2818/45-4422

بسم اللہ الرحمن الرحیم:۔ اصولی طور پر تنہائی میں آہستہ آواز سے ذکر کرنا بہتر ہے۔ لیکن اجتماعی طور پر جہرا ذکرکرنا شرعا جائزہے۔ اوراس سلسلہ میں حدیث قدسی سے ثبوت ملتاہے۔

عن أبي ھریرہ رضى اللہ عنہ قال قال النبي ﷺ يقول الله تعالى أنا عند ظن عبدي بي وأنا معه إذا ذکرنی فان ذکرنی في نفسه ذكرتہ فی نفسي وإن ذكرني في ملاء ذكرته في ملاء خير منهم (صحیح بخاری 9/121) (صحیح مسلم 4/2061)

اس لئے اگر کوئی متبع شریعت، شیخ کامل اپنے مریدوں کی اصلاح و تربیت کیلئے کسی ایسی جگہ ذکرکی مجلس منعقد کرے جہاں دوسرے عبادت کرنے والوں کی عبادت میں خلل نہ پڑے اور اسے لازم نہ سمجھا جائے تو اسکی اجازت ہے ۔ حضرت مولانا حکیم اخترصاحب نوراللہ مرقدہ یا ان کے خلفاء کی جانب سے ذکر کی مجالس کا انعقاد درست ہے۔ اور ان کے خلفاء سے اصلاحی تعلق قائم کرنا بھی درست ہے۔ صوفیاء کرام کا مقصد یہ ہے ذکر اللہ سے اللہ تبارک وتعالی کی یاد تازہ ہوتی ہے اور تعلق و محبت میں اضافہ ہوتا ہے۔

عن ابی ھر یرۃ  قال قال النبي ﷺ يقول الله تعالى أنا عند ظن عبدي بي وأنا معه إذا ذکرنی فان ذکرنی في نفسه ذكرتہ فی نفسي وإن ذكرني في ملاء ذكرته في ملاء خير منهم وإن تقرب إلى بشبر تقربت إليه ذراعا وإن تقرب إلى ذراعاً تقربت إليه باعا وإن أتاني يمشي أتيته هرولة – (متفق عليه) اخرجه البخاري في الصحيح، کتاب التوحید ، باب قول اللہ  و يحذركم اللہ نفسہ 6/2694)

( قوله ورفع صوت بذكر ) أقول : اضطرب كلام صاحب البزازية في ذلك فتارة قال إنہ حرام وتارة قال إنه جائز و فى الفتاوى الخيرية من الكراهة والإستحسان جاء في الحديث به اقتضى طلب الجهر به نحوه وإن ذكرنى فى ملاء ذكرته فى ملاء خير منهم - رواه الشيخان .... فقال بعض أهل العلم إن الجھر أفضل لأنه أكثر عملا ولتعدى فائدته إلى السامعين و يوقظ قلب الذاكر فيجمع همه إلى الفکر وبصرف سمعہ إليه ويطرد النوم ويزيد النشاط . (الدر المختار مع رد المحتار 1/660)

واللہ اعلم بالصواب

دارالافتاء

دارالعلوم وقف دیوبند

 

answered Feb 6 by Darul Ifta
...